سوموار، 8 دسمبر، 2014

8 دسمبر ، فیصل آباد کی تاریخ کا سیاہ ترین دن

4 تبصرے
تحریک انصاف کے پلان سی کے پہلا مرحلہ آج فیصل آباد سے شروع ہوا، فیصل آباد ہمیشہ سے پر امن شہر رہا ہے ،بڑی بڑی سیاسی تحریکوں نے اس شہر سے جنم لیا مگر زیادہ معاملات پر امن ہی رہے ، آج صبح گھر سے نکلتے ہی عجیب منظر دیکھنے میں آیا، چھوٹی عمر کے نوجوان ہاتھوں میں ڈنڈے لئے ٹائروں کو آگ لگا کر راستے بند کر رہے تھے، واپس آکر فیس بک پر اسٹیسس اپ ڈیٹ کیا تو احباب کے میسجز آنے شروع ہوگئے کہ بھائی گھبرائیں ناں ، کچھ نہیں ہوتا مگر پتہ نہیں کیوں چھٹی حس کسی آنے والے خطرہ سے کیوں ڈرا رہی تھی ،پہلا اپ ڈیٹ صبح دس بجے کے بعد کیا تھا ،ذرا اس کا مطالعہ کیجیئے
"پاکستان کا سب سے پر امن شہر فیصل آباد جلتے ٹائروں کے دھوائیں اور " گو نواز گو" اور" رو عمران رو " کے نعروں کی زد میں ہے

، ابھی صبح کا آغاز ہے ،ہر سڑک پر جوشیلے نوجوان ڈنڈے ہاتھوں میں تھامے لوگوں کو آگے جانے سے روک رہے ہیں ،حالات کی کشیدگی کسی بڑے ظوفان کا پیش خیمہ ثابت ہو سکتی ہے ، پی ٹی آئی اور ن لیگ کے کارکنوں کو ایک دوسرے کے سامنے کھڑا کر دیا گیا ہے ،خانہ جنگی کی سی فضا قائم کی جارہی ہے ،احتجاج ہرسیاسی جماعت کا بنیادی حق ہے مگر اس کشیدگی کے نتیجہ میں اگر ماڈل ٹاؤن لاہور، قاسم باغ ملتان جیسا کوئی سانحہ رونما ہو گیا تو اس کا ذمہ دار کون ہو گا"

ایک گھنٹہ بعددوسرا اپ ڈیٹ یہ تھاجس بات کا خطرہ تھا وہی ہوا 

"ایک ماں اپنے جگر گوشے سے محروم ہو گئی ہے
یا اللہ اس شہر پر امن کو اپنے حفظ و امان میں رکھ"

تھوڑی دیر بعد یہ اپ ڈیٹ کیا کہ

"ابھی گھنٹہ گھر چوک سے ہو کے آیا ہوں ، الیکٹرانک میڈیا کی گاڑیوں کے ارد گرد سو سے بھی کم افراد موجود ہیں ، اپنی ریٹنگ بڑھانے کے چکر میں دو طرفہ نعرہ بازی کے ذریعے گرما گرم ماحول پیدا کیا گیا ہے ، دوسری طرف سمن ناولٹی پل پر ایک نوجوان اپنی زندگی کی بازی ہار گیا ہے ، صبح جس خدشہ کا اظہار کیا تھا , وہ درست ہوتا جا رہا ہے ، اللہ پاک میرے پر امن شہر کو نظر بد سے بچا

آمین "

دکھی دل کے ساتھ دوپہر کو یہ ٹویٹ کیئے

"وہی ہوا جس کا ڈر تھا ، ن لیگ اور تحریک انصاف کے کارکن گتھم گھتا ، ڈنڈوں کا آزادانہ استعمال ، کون ذمہ دار ہے اس خانہ جنگی کا ؟"

"بد امنی اور خانہ جنگی سے بچا جا سکتا ھے ، ن لیگ اپنے کارکنوں کو واپس بلائے ، پی ٹی آئی کے لئے میدان کھلا چھوڑ دیا جائے

میں یہ کس کے نام لکھوں جو الم گزر رہے ہیں
میرے شہر جل رہے ہیں میرے لوگ مر رہے ہیں

#FaisalabadLockDown

اور لاسٹ اپ ڈیٹ کے نام سے یہ آخری اپ ڈیٹ لکھا ابھی ایک گھنٹہ قبل

"لاسٹ اپ ڈیٹ

#Faisalabad
ابھی چوک گھنٹہ گھر سے ہوتے ہوئے ناولٹی چوک کے قریب رانا ثناء اللہ کے ڈیرے کے باہر خان صاحب کے خطاب کے بعد گھر واپسی ہوئی ہے ، شہر پرسکون ہوچکا ہے ، چوک گھنٹہ گھر میں کھانے پینے کی دکانیں حسب معمول سجی ہوئی ہیں ، تین سو سے زائد افراد کے خلاف مقتول حق نواز کے قتل کی ایف آئی درج ہو گئی ہے ، خاں صاحب ہسپتال سے ہوئے ہوئے مقتول کے گھر بھی جائیں گے ، سب کچھ معمول پر آجائے گا مگر ماں کو اس کا بیٹا واپس نہیں ملے گا ، اگر کوئی مجھ سے تین لفظوں میں آج کے سانحہ کو سبب پوچھے تو میرے خیال میں یہ سب فیصل آباد کی نام نہاد تاجر قیادت کی مقامی ن لیگی قیادت کو ھلاشیری کا نتیجہ ہے ،احتجاج پی ٹی آئی کا حق تھا مگر ن لیگی کارکنوں کو درمیاں میں لا کر عمران خان کے ناکام شو کو کامیاب کروانے کے ساتھ ساتھ ایک انسانی جان کی بھی قربانی دے دی گئی"

میں نے تو یہی نتیجہ اخذ کیا ہے آج کے سانحہ کا

"اگر کوئی مجھ سے تین لفظوں میں آج کے سانحہ کو سبب پوچھے تو میرے خیال میں یہ سب فیصل آباد کی نام نہاد تاجر قیادت کی مقامی ن لیگی قیادت کو ھلاشیری کا نتیجہ ہے،احتجاج پی ٹی آئی کا حق تھا مگر ن لیگی کارکنوں کو درمیان میں لا کر عمران خان کے ناکام شو کو کامیاب کروانے کے ساتھ ساتھ ایک انسانی جان کی بھی قربانی دے دی گئی"
اللہ پاک میرے ملک کی حفاظت فرمائے(آمین)


4 تبصرے:

آپ بھی اپنا تبصرہ تحریر کریں

اہم اطلاع :- غیر متعلق,غیر اخلاقی اور ذاتیات پر مبنی تبصرہ سے پرہیز کیجئے, مصنف ایسا تبصرہ حذف کرنے کا حق رکھتا ہے نیز مصنف کا مبصر کی رائے سے متفق ہونا ضروری نہیں۔

اگر آپ کے کمپوٹر میں اردو کی بورڈ انسٹال نہیں ہے تو اردو میں تبصرہ کرنے کے لیے ذیل کے اردو ایڈیٹر میں تبصرہ لکھ کر اسے تبصروں کے خانے میں کاپی پیسٹ کرکے شائع کردیں۔

.